ایڈووکیٹ قادر خان مندوخیل متاثر ملازمین کے مسائل کے حل کے لئے کوشاں

Total
0
Shares

قومی اسمبلی کی خصوصی کمیٹی برائے متاثرہ ملازمین کا اجلاس چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر قادر خان مندوخیل کی زیرصدارت پاکستان انسٹیٹیوٹ برائے پارلیمانی سروسز ہال میں منعقد ہوا۔

وزارت تعلیم کی طرف سے آئے افسران سے کمیٹی کے احکامات پر عملدرآمد ریورٹ لی گئی۔افسران نے بتایا کہ کمیٹی کے حکم پر بھرتی اشتہار منسوخ کر دیا ہے،فیڈرل ڈائریکٹوریٹ آف ایجوکیشن کے ملازمین نے شکایات کے انبار لگا دیئے،خواتین اساتذہ نے کمیٹی کو بتایا کہ 17گریڈ کی اساتذہ 11 سال سے ڈیلی ویجز کام کر رہی ہیں،25 ہزار تنخواہ کا مطالبہ کرنے پر انتقام کا نشانہ بنایا گیا،6 مونٹیسوری اساتذہ کے بارے میں کمیٹی کے احکامات پر عملدرآمد نہیں ہوا بلکہ 6 خواتین اساتذہ کو نوکری سے نکال دیا گیا ہے،ڈی جی فیڈرل ایجوکیشن نے کہا کہ ان 6 اساتذہ کا معاملہ وزارت نے کرنا ہے۔چیئرمین کمیٹی نے حکم دیا کہ سیکرٹری وزارت تعلیم کل 2 بجے تک ذاتی حیثیت میں پیش ہوں اور ان 6 خواتین اساتذہ کی بحالی رپورٹ پیش کریں۔
عالیہ ظفر ،مصباح شاہین اور مبشر احمد کو معذور کوٹہ پر ریگولر کرنے کا حکم،1791 ملازمین کے بارے میں دیئے گئے سابقہ احکامات پر ایک ہفتہ کے اندر اندر عملدرآمد ریورٹ بھی طلب۔

ڈرگ ریگولیشن اتھارٹی۔(ڈریپ)
سیکڈ ملازمین نہیں ہیں،
3 ملازمین کو ریگولر کر دیا ہے،دو باقی ہیں،ملازمین نے بتایا کہ ہم 2 سینٹری ورکرز ہیں جو 12سال سے ڈیلی ویجز کام کر رہے تھے،اب محکمہ نے نکال دیا ہے،دیگر 107 ملازمین نے کمیٹی کو بتایا کہ ہم 14 سالوں سے ایک ہی گریڈ میں کام کر رہے ہیں،پروموشن نہیں دی جارہی۔کمیٹی نے حکم دیا کہ 2 سینٹری ورکرز کو فوری طور یر بحال کیا جائے اور 107 ملازمین کے مسائل 10 دن کے اندر اندر حل کر کے کمیٹی کو رپورٹ دی جائے،کمیٹی نے یہ بھی حکم دیا کہ 10 دن کے اندر محکمانہ رولز بنا کر کمیٹی کو دیئے جائیں۔

نیشنل انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ۔
سیکڈ ملازمین کوئی نہیں ہیں ،کانٹیجنٹ 4 لوگ ہیں جو 2013 سے کام کر رہے ہیں۔لوئر گریڈ کے 32 ملازمین ہیں اس کے علاوہ 17 مزید ملازمین ہیں پراجیکٹ کے جو 2005 سے کام کر رہے ہیں۔کمیٹی نے حکم دیا کہ 58 اور 17 پراجیکٹ ملازمین کیلئے فوری طور پر پی سی فور بنایا جائے اور 10 دن کے اندر اندر پی سی فور کی کاپی کمیٹی کو دی جائے،مزید کمیٹی نے سیکرٹری پلاننگ 10 دن کے اندر اندر پی سی فور منظور کرنے کا حکم.

پاکستان گرلز گائیڈ ایسوسی ایشن۔
زاہدہ نواز نامی ملازمہ کو مس کنڈکٹ پر محکمہ نے نکالا ہے،اس کی تفصیلات کمیٹی کو دی جائیں،کیا ملازمہ کو شوکاز دیا کہ نہیں،
چیئرمین کمیٹی نے حکم دیا کہ محکمہ خود متاثرہ ملازمہ سے رابطہ کرے اور دو دن بعد کمیٹی کی میٹنگ میں مکمل تفصیلات کیساتھ رپورٹ دی جائے۔

فیڈرل ایجوکیشن
33 ملازمین کو 6 ستمبر کو بحال کیا اور آج ہمیں نوکری سے نکال دیا گیا ہے۔ویڈ لاک پالیسی پر عملدرآمد ابھی تک کیوں نہیں کیا گیا۔اس کے علاوہ لیڈی ٹیچر صائمہ نے کمیٹی کو بتایا کہ ہم 4 ملازمہ 2013 سے ڈیلی ویجز کام کر رہی تھیں اور 2022کو نکال دیا۔کمیٹی نے حکم دیا کہ ویڈلاک پالیسی پر عمل نہ کرنے اور بار بار کمیٹی کے کے احکامات کو نظرانداز کرنے کی وجہ سے کمیٹی نے سیکرٹری ایجوکیشن کو شوکاز جاری کر دیا،اور سپیکر کی رولینگ کی خلاف ورزی پر تحریک استحقاق کا بھی حکم،صائمہ وغیرہ 4 ملازمین کا کیس فوری طور پر ایف پی ایس سی کو بھیجنے کا حکم

فیڈرل ڈائریکٹوریٹ ایجوکیشن ۔
ملازمین نے کمیٹی کو بتایا کہ 202 کمیونٹی ٹیچر ہیں اور چار سالوں سے کام کر رہی ہیں،تنخواہیں بند کر دی گئی ہیں۔افسران نے بتایا کہ اے جی پی آر نے تنخواہ پر اعتراض لگا رکھا ہے جس پر چیئرمین کمیٹی نے حکم دیتے ہوئے اے جی پی آر کو دو دن بعد جمعہ کو میٹنگ میں پیش ہونے کا حکم دے دیا۔اس کے علاوہ کمیٹی نے 127 ملازمین جن کو سید خورشید علی شاہ کی کمیٹی نے ریگولر کیا تھا مگر ادارے نے عمل نہیں کیا،کو فوری طور یر ریگولر کیا جائے۔کمیٹی نے وزارت خزانہ کو ملازمین کے ہاؤس ہائیرنگ کے فنڈذ جاری کرنے کے بھی احکامات دیئے اور اسلام آباد کی سکولوں کی بسوں کا فنڈ بھی قائم کرنے کا حکم۔

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی۔
ملازمین نے کمیٹی کو بتایا کہ کمیٹی کے احکامات پر عملدرآمد نہیں ہوا ،رخسانہ بی بی نے کمیٹی کو بتایا کہ کمیٹی نے حکم دیا تھا کہ ملازمین کو ریگولر کرنے تک کوئی بھرتی نہ کی جائے،اس کے باوجود بھرتی کیلئے اشتہار دے دیا گیا ہے۔کمیٹی نے حکم دیا کہ رخسانہ بی بی کا معاملہ فوری طور پر حل کیا جائے اور وائس چانسلر کو عدم حاضری پر شوکاز جاری کر دیا اور 28 فروری کو تمام سابقہ احکامات پر عملدرآمد رپورٹ کیساتھ طلب کر لیا۔

نیشنل کمیشن برائے ہیومن ڈویلپمنٹ۔
ملازمین کے مسائل کے حل کیلئے ادارے کو 10 دن کے اندر اندر مکمل تفصیلات کمیٹی کو دینے کا حکم۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

You May Also Like

این آئی سی ایچ میں ڈاکٹر عمرانہ پل کا پچھلے آٹھ سالوں سے ڈیوٹی سے مبینہ غیر حاضر رہنے کا انکشاف

نیشنل انسٹیٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ(این آئی سی ایچ) کے ملازم کی جانب سے ادارہ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر کو جمع کروائی گئی درخواست میں انکشاف ہوا ہے کہ 2009 سے لے…
View Post

وزیر بلدیات سندھ کا سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی افسران کی جانب سے بھتہ طلبی کے معاملہ کا سخت نوٹس

سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کے افسران کی جانب سے رشوت/بھتہ طلب کرنے کے معاملہ کا وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ نے معاملے کا نوٹس لے لیا ڈی جی سندھ…
View Post

بلدیاتی خدمات کی فراہمی کیلئے منتخب بلدیاتی چیئرمینز کو معاونت فراہم کرینگے، ٹرانزیشن افسر فیض احمد شیخ

ضلع شرقی میں ربیع الاول میں جلوس ومحافل سمیت دیگر پروگرام میں بلدیاتی و انتظامی خدمات کی فراہمی کے حوالے سے علمائے کرام وافسران کا ڈپٹی کمشنر ایسٹ الطاف احمد…
View Post

ڈائریکٹر جنرل کی ہدایت پر ایس بی سی اے ڈیمالیشن اسکواڈ نے غیر قانونی پورشنز کو منہدم کردیا

ڈائریکٹر جنرل سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی محمد اسحاق کھوڑو کی ہدایت پر ڈیمالیشن اسکواڈ نے شہر کے مختلف ڈسٹرکٹ میں کارروائی کرتے ہوئے غیر قانونی اضافی منزلوں اور پورشنز کو…
View Post